بدلنا ہوگا خود ہم کو

یقین مانو کہ جب تک یہ نظام زر نہ بدلے گا
بھیانک مفلسی کی رات کا یہ منظر نہ بدلے گا

اگر بالفرض میں رہبر کسی کو مان لوں تو پھر
ضمانت کون دے کہ راہ میں وہ رہبر نہ بدلے گا؟

جاگیردار، انوسٹر، بھائی و منسٹر، سب کا ہے ایک ہی گھر
عوام جب تک نہ بدلے گی، یہ پورا گھر نہ بدلے گا

مزاج دہر بھی تلخ و ترش کتنا ہی سہی مگر
بدلنا ہوگا خود ہم کو، کوئی آکر نہ بدلے گا

شاعر: نامعلوم

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

تبصرہ کیجیے
محمد زبیرمرزا says:

@محمداسد باوجودتلاش کے شاعرکا نام معلوم نہیں ہوا- کوشش جاری ہے 🙂

اس تبصرے کا جواب دیںجواب

@محمد زبیرمرزا: اس نظم کے شاعر اب تک نامعلوم ہیں۔ آپ کو اگر علم ہو تو ضرور بتایئے گا۔

اس تبصرے کا جواب دیںجواب

یہ شوق اورذوق بھی رکھتے ہیں آپ بہت خُوب

اس تبصرے کا جواب دیںجواب