شدید گرمی اور لو؛ کیا کریں اور کیا نہ کریں؟

شدید گرمی کی لہر نے پورے پاکستان کو ہی لپیٹ میں لے رکھا ہے لیکن اس بار جو حال کراچی کا ہوا ہے وہ انتہائی افسوس ناک ہے۔ صرف گذشتہ چند دنوں میں سینکڑوں افراد شدید گرمی میں لو لگنے اور پانی و بجلی کی عدم دستیابی کے باعث اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھے ہیں اور ہزاروں افراد اب بھی مختلف ہسپتالوں اور طبی مراکز میں زیر علاج ہیں۔ اس سے بھی زیادہ افسوس ناک امر یہ ہے کہ وفاقی اور صوبائی حکومتیں محض تماش بینوں کی طرح بڑھتی ہوئی ہلاکتوں کو دیکھ رہی ہیں۔ دل خون کے آنسو روتا ہے کہ ہم نے بے حس، لا پرواہ، خود پسند اور خود غرض لوگوں کے ووٹ دے کر اپنے اوپر مسلط کرلیا ہے۔

بہرحال، اس تحریر کا مقصد جان لیوا 'ہیٹ اسٹروک' یعنی شدید گرمی کی لہر میں لو سے بچنے کے لیے احتیاطی تدابیر سے متعلق شعور اجاگر کرنا ہے۔ آخر میں لو کا شکار ہوجانے کی صورت میں متاثرہ شخص کی فوری مدد سے متعلق ہدایات بھی درج ہے۔ گزارش ہے کہ اس مضمون کو زیاہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچائیں تاکہ عوام الناس اپنی مدد آپ کے تحت اس صورتحال سے نمٹنے کی کوشش کرسکے۔

شدید گرمی میں یہ کام کریں:

  • پانی اور گھریلو مشروبات (لیمو پانی، لسی وغیرہ) زیادہ استعمال کریں۔ پیاس نہ بھی لگے تو وقفے وقفے سے پانی پیئں۔
  • زیادہ سے زیادہ وقت ہوادار جگہ یا چھاؤں/سائے میں گزاریں۔ اگر دھوپ میں کام کرنا ضروری ہو تو درمیان میں وقفے ضرور لیں۔
  • سر پر گیلا کپڑا یا تولیہ رکھیں تاکہ آپ کا سر گرم ہونے سے بچا رہے۔
  • ہلکے اور ڈھیلے ڈھالے ملبوسات پہنیں۔ کوشش کریں کہ کپڑوں کا رنگ ہلکا ہو۔
  • گھر سے باہر نکلتے وقت سر اور گردن کو ڈھانپنے کے لیے ٹوپی اور چھتری کا استعمال کریں۔
  • بچوں، بزرگوں اور پالتو جانوروں کو گھر کے اندر یا چھاؤں میں رکھیں۔
  • پڑوسیوں کا بھی خیال رکھیں، بطور مسلمان ہمارا فرض ہے کہ ان کے جان و مال کو محفوظ بنائیں۔

شدید گرمی میں یہ کام نہ کریں:

  • براہ راست دھوپ میں گھومنے پھرنے یا مشقت والا کام نہ کریں۔
  • سخت جسمانی سرگرمیاں (مثلاً ورزش وغیرہ) نہ کریں۔ ضروری ہو تو علی الصبح یا شام کے اوقات میں یہ کام کریں۔
  • بچوں کو دن کے وقت گھر سے باہر کھیلنے نہ دیں۔
  • بند گاڑی میں سفر کریں نہ ہی زیادہ دیر بیٹھیں۔
  • دکانوں پر ملنے والے ٹھنڈے مشروبات (کولڈ ڈرنگ) اور کافی نہ پیئں۔
  • مختصر، چست اور گہرے رنگ کے ملبوسات نہ پہنیں۔
  • شدید گرمی کے اوقات (بالخصوص دوپہر 12 تا 3 بجے) چولہے کا استعمال نہ کریں۔

شدید گرمی میں لو لگ جائے تو یہ کریں:

  • متاثرہ شخص کو فوراً کسی ٹھنڈی جگہ لے جائیں۔
  • جسم کو گیلے کپڑے سے صاف کریں۔
  • سر پر عام درجہ حرارت کا پانی ڈالیں جو ٹھنڈا یا گرم نہ ہو۔
  • متاثرہ شخص کو لیمو پانی یا او آر ایس (ORS) پلائیں۔
  • فوری طور پر قریبی طبی مرکز لے جائیں۔

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

6 تبصرے

  1. بےنام نے کہا:

    لو سے بچنے کے لیے پیاز کا عرق نہایت مفید ہے احتیاطی طور پر اس کو کاٹ کر جیب میں رکھ لیں.

    و لگنے پر پیاز کو پیس کر بدن پر ملیں اور سر اور ہاتھوں اور پیر کے تلووں پر لگایں اور پیٹ پر ملیں اس کے علاوہ آم کی کیری دستیاب ہو تو اس کو پکا کر اس کا رس نکال کر پانی میں ملا کر پلایں اور دو سے تین مرتبہ برہنہ پیٹھ پر ایک جھاڑو کو پانی میں بھگو کر اس کے پانی کو جھٹکیں اور اس عمل کو دو سے تین دفعہ دوہرایں

    اس تبصرے کا جواب دیںجواب
  2. محمد اسد نے کہا:

    @بےنام: انتہائی مفید تبصرے کا شکریہ۔ لیکن بے نام؟ 🙁

    اس تبصرے کا جواب دیںجواب
  3. حسن نے کہا:

    لو لگنے پر کان میں پیاز کا عرق ڈالنا بالکل نہیں بھولیں, جس جگہ سے میں ہوں لولگنا بالکل غیر معمولی بات نہیں ہے.
    اللہ آپ لوگوں کی مدد کرے.

    اس تبصرے کا جواب دیںجواب
  4. محمد اسد نے کہا:

    @حسن: بہت شکریہ حسن بھائی، مجھے اندازہ ہے کہ جہاں سے آپ ہیں وہاں گزشتہ ماہ ایسی ہی صورتحال تھی 🙂 اللہ آپ کو اپنے حفظ و امان میں رکھے۔ آمین

    اس تبصرے کا جواب دیںجواب
  5. سچی یار آج تو واقعی رمضان شریف یاد دلوا دیا ۔۔۔۔ 🙁 اس جھلسا دینے والی گرمی نے

    اس تبصرے کا جواب دیںجواب
  6. محمد اسد نے کہا:

    @وسیم ابن حبیب: اسی کو تو کہتے ہیں ستمبر کی ستمگری 🙂

    اس تبصرے کا جواب دیںجواب

اپنی رائے کا اظہار کریں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے