الیکشن 2013ء اور پتنگ باز سجنا

7

ممکن ہے الیکشن کمیشن آف پاکستان پورے ملک میں الیکشن 2013ء کو صاف و شفاف کروانے میں کامیاب ہوگیا ہو لیکن 11 مئی کو کراچی کی عوام نے جو کچھ اپنی آنکھوں سے دیکھا اور کانوں سے سنا، اس کے بعد الیکشن کمیشن کی کسی بات پر یقین کرنا ممکن نہیں رہا۔ ماضی میں جس طرح شہر کراچی کے انتخابی مینڈیٹ پر ڈاکا ڈالا جاتا رہا اسی طرح اس بار بھی کھلم کھلا دھاندلی کی گئی۔ الیکشن کمیشن کی تمام تر یقین دہانیوں کے باوجود پولنگ اسٹیشنز میں نہ صرف جعلی ووٹ ڈالے گئے بلکہ حق رائے دہی کو استعمال کرنے کی غرض سے آنے والوں ووٹرز سمیت ریٹرننگ آفیسرز اور دیگر سرکاری و غیر سرکاری عملے کو بھی زدو کوب کیا گیا۔

تمام دن الیکشن کمیشن آف پاکستان اور افواج پاکستان "پتنگ باز سجنا" سے وفا کرتے رہے
تمام دن الیکشن کمیشن آف پاکستان اور افواج پاکستان “پتنگ باز سجنا” سے وفا کرتے رہے

اس دہشت گردی کے پیچھے کون لوگ ہیں؟ یہ کسی سے ڈھکی چھپی بات نہیں۔ روایتی میڈیا سے لے کر سوشل میڈیا تک سب ہی متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) پر انگلی اٹھا رہے ہیں۔ متحدہ قومی موومنٹ کی جانب سے بزور طاقت انتخابی عمل کو یرغمال بنتے دیکھ کر کراچی میں واضح نمائندگی رکھنے والی سیاسی و مذہبی جماعتوں بشمول جماعت اسلامی، سنی تحریک اور مہاجر قومی موومنٹ نے انتخابی عمل کے بیچ ہی کراچی میں الیکشن کے بائیکاٹ کا ہی اعلان کر دیا۔ لیکن آفرین ہے الیکشن کمیشن آف پاکستان پر کہ جو اس خوشی کے دن کراچی والوں کو روتا دھوتا دیکھتا رہا لیکن اس کے کان پر جوں تک نہیں رینگی۔ محسوس ہوتا تھا کہ شفاف انتخابات کے ذمہ دار دونوں اہم ادارے الیکشن کمیشن آف پاکستان اور افواج پاکستان “پتنگ باز سجنا” سے وفائی کا ثبوت دے رہے ہیں۔

شاید کچھ “حق پرست” حضرات فیس بک، ٹویٹر اور بلاگز پر انتخابی عمل میں دھاندلی کی ویڈیوز شیئر کرنے والوں اور متحدہ قومی موومنٹ کے خلاف بات کرنے والے لوگوں کو جماعتی، تحریکی، طالبانی ایجنٹ یا کچھ اور قرار دے کر ایم کیو ایم کی دھاندلیوں پر پردہ ڈالنے کی کوشش کریں، لیکن اس وقت کیا کیجیے گا کہ جب غیرجانبدار فلاحی تنظیمیں بھی انتخابات کے دوران متحدہ قومی موومنٹ کے کارکنان کی غیر اخلاقی و غیر قانونی حرکتوں کا پردہ فاش کریں؟ مثال کے لیے آپ FAFEN (آزاد اور منصفانہ انتخابات کے نیٹ ورک) کے چند ٹویٹس ملاحظہ کریں کہ جس میں نام لے کر انتخابی عمل میں دراندازی کرنے والی تنظیم کی نشاندہی کی گئی ہے۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں مصنف سے زیادہ

7 تبصرے

  1. عمار ابنِ ضیا کہتے ہیں

    ابتدائے عشق ہے۔۔۔ ابھی تو دیکھیے، کیا کیا سامنے آتا ہے۔

    اس تبصرے کا جواب دیںجواب
  2. شعیب صفدر کہتے ہیں

    اب اگلے پانچ سال پھر یرغمال رہو اب بدمعاشوں کے ہاتھوں!! سندھ میں وہ حکومت کا حصہ ہو گے!!!

    اس تبصرے کا جواب دیںجواب
  3. منیر عباسی کہتے ہیں

    کمزور تو صرف احتجاج کر سکتا ہے. طاقت ور کے پاس کرنے کو بہت کچھ ہوتا ہے.

    تمت بالخیر.

    اس تبصرے کا جواب دیںجواب
  4. جواد احمد خان کہتے ہیں

    ایم کیو ایم کے لیے چیلنج نا قابل برداشت ہے وہ نہیں چاہتے کہ کوئی بھی انکے مدمقابل رہے یہ سراسر ایک نفسیاتی حربہ کہ کراچی کو ایم کیو ایم کے ایک ناقابل تسخیر قلعے کے طور پر پیش کیا جائے. لیکن جاننے والے جانتے ہیں کہ اس قلعے میں دراڑیں پڑ چکی ہیں. جس دن قومی رہنما حقیقی قومی رہنما بن گئے وہ دن ایم کیو ایم کے زوال کی ابتداء بن جائے گا.

    اس تبصرے کا جواب دیںجواب
  5. افتخار اجمل بھوپال کہتے ہیں

    اس پر طُرّہ یہ کہ کہ دوغلا (اندر سے ہندو نام مسلمان) الطاف حسین ایسٹیبلشمنٹ کو دھکیاں دے کر کہتا ہے ”میں دھمکی نہیں دے رہا کیونکہ دھمکیاں تو بزدل دیتے ہیں بہادر میدان میں اُترتے ہیں“۔ اب کرچی والے تیار ہو جائیں ۔ مجھے تو وہ دن یاد آئے جب میرا پھوپھی زاد بھائی جو میرا بہترین دوست بھی ہے کو اُس کے محلے والوں نے بتایا کہ اب وہ اُن کی حفاظت نہیں کر سکتے تووہ اپنی کار میں اپنے بیوی بچوں اور جتنا سامان کارمیں سمایا لے کر رات کے اندھرے میں کراچی سے نکلا تھا کیونکہ دو جوان بیٹیوں کا باپ تھا

    اس تبصرے کا جواب دیںجواب
  6. فرحان دانش کہتے ہیں

    صرف الزام لگانے سے کوئی “مجرم” ثابت نہں ہوتا. دھاندلی کی کوئی وڈیو یہ ثابت نہیں کرتی کہ دھاندلی “ایم کیو ایم” کے حق میں کی جا رہی ہے یا “پتنگ” پر مہر لگائی جا رہی ہے. اور جہاں تک رہی بات “فافن” کی ان بیچاروں کے اعدادوشمار ہی درست نہ تھے ٹی وی اور اخباروں میں معدزت کرتے پھر رہے ہیں اور الیکشن کمیشن میں پیش ہو رہے ہیں.
    یہ تصویر ملاحظہ کیجیے.
    http://postimg.org/image/hrr91cyi1/
    یہ “فافن” کی ہی رپورٹ ہے جس کے مطابق تحریک انصاف جن 6 علاقوں سے جیتی وہاں رجسٹرڈ ووٹ سے زیادہ ووٹ کاسٹ ہوئے. کیا یہ دھاندلی نہیں ہے ؟

    اس تبصرے کا جواب دیںجواب
  7. محمداسد کہتے ہیں

    @فرحان دانش: جناب میں نے کب کہا کہ کسی اور جماعت نے دھاندلی نہیں کی، بالکل کی ہوگی۔ لیکن جس طرح متحدہ قومی موومنٹ کے لوگوں نے بزور طاقت و جبر دسیوں ووٹ فی سیکنڈ ڈال کر جو ریکارڈ قائم کیا وہ ناقابل تسخیر ہے۔ اسلحہ کا استعمال، پولنگ اسٹیشن پر قبضہ، این جی اوز اور میڈیا نمائندگان کو زد و کوب کیے جانے کے واقعات صرف کراچی ہی میں نظر آئے کیوں کہ ملک کے دیگر حصوں میں تو ایم کیو ایم نامی وباء موجود ہی نہیں!

    اس تبصرے کا جواب دیںجواب

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.